سینیٹ اجلاس،سینیٹر عتیق شیخ اور مشاہد اللہ کے درمیان تلخ کلامی….تم بدمعاش ہو، میں تمہارے دانت توڑ دوں گا، ،مشاہد اللہ

سینیٹ اجلاس،سینیٹر عتیق شیخ اور مشاہد اللہ کے درمیان تلخ کلامی

یہ شخص ذاتیات پر آرہا ہے اس کا منہ بند کیا جائے،میاں عتیق شیخ

 میں نے پچھلے اجلاس میں بھی تمہیں کچھ نہیں کہا تھا،مشاہد اللہ

 تمہیں تمیز نہیں ،مشاہد اللہ کو باہر نکالیں ،عتیق شیخ کا سپیکرسے مطالابہ

تم بدمعاش ہو، میں تمہارے دانت توڑ دوں گا، میں بات کر رہا ہوں یہ پنگے لے رہا ہے اس کو خاموش کرایا جائے،مشاہد اللہ

 میں تمہیں چھوڑوں گا  نہیں:عتیق شیخ ، جا تو میرے خلاف جا کے ایف آئی آر کروا دے، میں تمہیں باہر ملتا ہوں، دیکھتا ہوں: ن لیگی سینیٹر

 چیئرمین سینیٹ دونوں اراکین کو خاموش کراتے رہے اور نامناسب الفاظ حذف کرنے کی ہدایت بھی کی

جو کچھ ایوان میں ہوا اس سے پورے ایوان کی بے عزتی ہوئی،بیرسٹر محمد علی سیف

اسلام آباد (ویب ڈیسک )سینیٹ کے اجلاس میں ایم کیو ایم رہنما سینیٹرعتیق اور( ن) لیگی رہنما سینیٹر مشاہد اللہ خان کے درمیان تلخ کلامی ہوئی ہے۔سینیٹ کا اجلاس چیئرمین صادق سنجرانی کی زیرصدارت ہوا اور سینیٹر مشاہد اللہ خان کے خطاب کے دورن بد نظمی ہوئی . صباح نیوزکےمطابق سینیٹرمیاں عتیق شیخ نے کہا کہ یہ شخص ذاتیات پر آرہا ہے اس کا منہ بند کیا جائے۔ مشاہداللہ نے کہا کہ میں نے پچھلے اجلاس میں بھی تمہیں کچھ نہیں کہا تھا۔سینیٹر مشاہد اللہ نے کہا کہ تم لوگوں کے قاتل ہوں، میں نے تو صرف نمونہ کہا تھا۔ عتیق شیخ نے کہا کہ تمہیں تمیز نہیں ہے اور چیئرمین سینیٹ سے مطالبہ کیا کہ مشاہد اللہ کو باہر نکالیں۔ن لیگی سینیٹرمشاہد اللہ نے کہا کہ تم بدمعاش ہو، میں تمہارے دانت توڑ دوں گا۔ میں بات کر رہا ہوں یہ پنگے لے رہا ہے اس کو خاموش کرایا جائے۔عتیق شیخ نے مشاہد اللہ کو کہا کہ میں تمہیں چھوڑوں گا  نہیں۔ ن لیگی سینیٹر نے کہا کہ جا تو میرے خلاف جا کے ایف آئی آر کروا دے۔مشاہد اللہ نے دھمکی دی کہ میں تمہیں باہر ملتا ہوں، دیکھتا ہوں۔ چیئرمین سینیٹ دونوں اراکین کو خاموش کراتے رہے اور نامناسب الفاظ حذف کرنے کی ہدایت بھی کی۔بیرسٹر محمد علی سیف نے کہا کہ جو کچھ ایوان میں ہوا اس سے پورے ایوان کی بے عزتی ہوئی۔ مسئلہ یہ ہے کہ کسی کو بلڈ پریشر پر کنٹرول نہیں اور کسی کو زبان پر کنٹرول نہیں۔ جب آپ کسی پر ذاتی تنقید کریں تو پارٹی کو مت لائیں۔ اس طرح کی زبان سے ایوان کا تقدس مجروح ہوتا ہے۔

Editor

Next Post

سانحہ تیزگام' شفاف تحقیقات کیلئے درخواست پر فیصلہ محفوظ ..

جمعہ ستمبر 18 , 2020
سانحہ تیزگام’اسلام آباد ہائی کورٹ نے شفاف تحقیقات کیلئے درخواست پر فیصلہ محفوظ کر لیا سانحہ تیز گا م کی وزارت داخلہ، پولیس اور ریلوے انکوائری کر رہی ہے،عدالت وزیر ریلوے کا حادثہ پر جو کنڈکٹ رہا اس پر انہیں استعفیٰ دینا چاہئے ، وکیل درخواست گزار کنڈکٹ پر استعفیٰ […]