ووٹ چورو شرم کرو حیا کرو۔ مریم نواز

عمران کی بے وقوفی نے ڈسکہ انتخاب ملک گیر انتخاب بنا دیا
ووٹ چوروں کے ساتھ خوف کو بھی شکست دے دی گئی
جلسہ سے خطاب

ڈسکہ (ویب ڈیسک)

مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز نے کہا ہے کہ ضمنی اتتخابات کے دوران ان کا بس نہیں چلا تو فائرنگ کرادی تاکہ پارٹی کارکنوں کو ووٹ ڈالنے سے خوفزدہ کرسکیں  ڈسکہ کی عوام نے تمام حربے ناکارہ کردیے ، عمران خان کی بے وقوفی نے ڈسکہ کا الیکشن پورے پاکستان کا الیکشن بنا دیا. گزشتہ روز  ڈسکہ میں جلسہ سے خطاب کے دوران انہوں نے کہا کہ ڈسکہ کے عوام نے ووٹ چوروں بلکہ خوف کو بھی شکست دی۔انہوں نے کہا کہ فائرنگ کے بعد وہ سر جوڑ کر بیٹھ گئے اور پولنگ کی رفتار سست کرادی گئی۔ مسلم لیگ (ن)  ڈسکہ اور وزیر آباددور کی بات ،نوشہرہ میں گھس کر مارا۔ مریم نواز نے کہا کہ ووٹ چوروں سے کہتی ہوں کہ شرم کرو حیا کرو۔ رینجرز نے اپنی آنکھوں سے دیکھا کہ انتخابی عملہ ووٹوں سے بھرا تھیلا لے جا کر گاڑی میں بیٹھا اور عادل اور عطا اللہ تارڑ نے اس  وہ اس قدر ڈھیٹ تھا کہ وہاں کھڑے ہو کر لوگوں کو فون کرتا رہا کہ مجھے بچا ؤلیکن کوئی اس کی مدد کو نہیں آیا کیونکہ وہ عوام کی گرفت میں آگیا تھا۔ جب دوبارہ گنتی ہوئی تو 300 ووٹ جعلی نکلے اس لیے کہتی ہوں کہ ووٹ کو عزت دینے والوں نے خوف کو شکست دے دی۔عمران خان، ان کے وزرا اور مشیروں کو سلام پیش کرتی ہوں جن کی نااہلی اور ناجائز طریقوں سے ڈسکہ کا الیکشن پورے پاکستان کا الیکشن بن گیا۔ ڈسکہ کے انتخابات سے ظاہر ہو گیا کہ الیکشن 2018 میں کس طرح انتخابات چھینے گئے۔مریم نواز نے کہا کہ جب 14 گھنٹے کے بعد مختلف پولنگ کا 20 اغوا شدہ انتخابی عملہ صبح الیکشن کمیشن پہنچا تو وہ یہ بتانے سے قاصر تھے کہ انہیں کون لے کر گیا، کہاں لے کر گیا تو ان کے پاس کوئی جواب نہیں تھا۔ پارٹی نے الیکشن کمیشن سے ڈسکہ میں دوبارہ انتخابات کرانے کا مطالبہ کیا ہے اور اگر دوبارہ انتخابات ہوئے تبدیلی کو قبر میں دفنا دیں گے۔ مریم نواز نے کہا کہ حکمراں جماعت کے مشیروں نے جواز پیش کیا کہ دھند ہہت تھی، دھند بھی بڑی سمجھدار ہے کہ صرف ادھر گئی جہاں سے 20 انتخابی عملہ غائب ہوا۔قبل ازیں نے لاہور سے ڈسکہ روانگی سے قبل میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے پارٹی  رہنمانے کہا کہ عمران خان کے اراکین اسمبلیوں کو بھی معلوم ہے کہ عمران خان نہ کبھی پہلے آسکا اور نہ اب دوبارہ آئے گا اس لیے وہ اپنے سیاسی مستقبل کو بچانے کے لیے اپنے اپنے مسکن ڈھونڈ رہے ہیں، بہت جلد ان کا شیرازہ بکھر جائے گا۔انہوں نے کہا کہ کہ 2 جانیں چلی گئیں اس کے باوجود جس طرح ڈسکہ کے عوام نے جمہوریت کی جنگ لڑی، ووٹ کو عزت دی، انہوں نے نہ صرف ووٹ دیا بلکہ ووٹ پر آخری لمحے تک پہرا دیا اس کا شکریہ ادا کرنے میں ڈسکہ کے عوام کے پاس جارہی ہوں۔مریم نواز نے کہا کہ انہوں نے سارے حربے آزمالیے، یہ لوگ کھل کر سامنے آگئے، ایک ایک چیز انہوں نے استعمال کی، فائرنگ کروائی، 2 جانیں لیں، الیکشن کمیشن کے بندے اغوا کرلیے، 20 پریزائڈنگ افسران مسنگ پرسن بن گئے۔ان کا کہنا تھا کہ انہوں نے ہر طرح کی انتظامیہ، پولیس کو شامل کر کے دھاندلی کا منصوبہ بنایا تھا اس پر عملدرآمد کرنے، ریاستی بدترین دہشت گردی کے باوجود یہ وہاں سے بری طرح ہارے اور یہاں سے انہیں عوام میں اپنی حیثیت کا پتا چل جانا چاہیے کہ آٹا چور، چینی چور، دوائی چور، ووٹ چور کو کس طرح عوام نے چاروں صوبوں کے ضمنی انتخاب میں بری طرح مسترد کردیا ہے۔ان کا مزید کہنا تھا کہ کل کچھ اور ویڈیوز سامنے آئیں، جس میں ایک ویڈیو میں ایک پریزائڈنگ افسر یہ بتایا رہا ہے کہ گاڑی میں سوار کچھ لوگوں نے آکر کہا کہ الیکشن کمیشن کی گاڑی میں واپس نہیں جانا بلکہ ہمارے ساتھ جانا ہے۔مریم نواز نے کہا کہ اس طرح کے ثبوتوں سے یہ کھل کر سامنے آگئے ہیں، میں عمران خان ووٹ چور کا شکریہ ادا کرنا چاہتی ہوں کہ اس نے عوام کو اچھی طرح یہ سمجھا دیا کہ 2018 میں کس طرح عوام کے ووٹ پر ڈاکہ ڈال کر اسے 22 کروڑ عوام کے اوپر مسلط کیا گیا۔انہوں نے مزید کہا کہ ایک پیج پر ہونے، تمام اداروں کی سپورٹ ہونے کے باوجود، ہر چیز پر قبضہ کرنے کے باوجود پاکستانی عوام نے اسے ہر جگہ سے مسترد کردیا ہے۔ایک سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ کیوں کہ یہ ووٹ نہیں لے سکتے جہاں عوام کے ووٹ کی بات آتی ہے یہ ناکام ہوتے ہیں جہہاں غنڈہ گردی اور بدمعاشی کی بات آتی ہے وہاں یہ سب سے آگے ہوتے ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ اس ایک سیٹ کی خاطر 2 جانیں چلی گئیں، نوشہرہ وزیرآباد میں شکست سے بے عزتی ہورہی تھی اس لیے یہ سیٹ وہ لینا چاہتے تھے اس لیے تمام دھاندلیاں کر کے جب کچھ نہ ملا تو 20 پریزائڈنگ افسران کو اغوا کرلیا گیا۔ان کا کہنا تھا کہ ڈسکے میں بکسے کا ہی پتا نہیں چلا اور یہ دھند کی بات کرتے ہیں تو کیا 361 پولنگ اسٹیشنز میں سے کیا یہ 20 پولنگ اسٹیشنز ہی تھے جن کے لوگوں نے غائب ہونا تھا اور دھند میں 2-4 نہیں بلکہ 12 سے 14 گھنٹوں بعد یہ آئے اور جب یہ آئے تو اچانک نتیجہ تبدیل ہوگیا اور صرف انہی 20 پولنگ اسٹیشنز کا ہوا۔مریم نواز نے کہا کہ اگر مجھے یہ معلوم ہوتا کہ انہوں نے اس سیٹ کی خاطر ناحق 2 جانیں لے لینی ہیں تو یہ نشست ویسے ہی انہیں دے دیتی۔ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ عوام ناراض ہے، جب عوام ناراض ہوتے ہیں تو اراکین بھی ناراض ہوتے ہیں، ان اراکین کو بہپت اچھی طرح عوام کے جذبات کا علم ہوتا ہے اس طرح عمران خان کے اراکین اسمبلیوں کو بھی معلوم ہے کہ عمران خان نہ کبھی پہلے آسکا اور نہ دوبارہ آئے گا اس لیے وہ اپنے سیاسی مستقبل کو بچانے کے لیے اپنے اپنے مسکن ڈھونڈ رہے ہیں، بہت جلد ان کا شیرازہ بکھر جائے گا۔

Editor

Next Post

غریبوں کا مرنا آسان جینا مشکل بنادیا گیا ہے ۔ سراج الحق

اتوار فروری 21 , 2021
پی ٹی آئی پہلے بل جلاتی تھی اب 22کروڑ عوام کے دل جلا رہی ہے اس دور میں کسی کو  ایک پل کا سکھ نصیب نہیں ہوا قوم نے سب کو آزما لیا اب جماعت اسلامی بہترین آپشن ہے امیر جماعت اسلامی پاکستان کا  تقریب ختم بخاری سے خطاب کرتے […]