ٹرائل کے دوران چین کی کورونا ویکسین 86 فیصد مؤثر ثابت ہوئی، متحدہ عرب امارات

ابوظہبی (ویب ڈیسک)

چین کی کورونا وائرس متحدہ عرب امارات میں کیے گئے تجرباتی آزمائش کے دوران 86 فیصد مؤثر پائی گئی جب کہ ویکسین کے مضر اثرات بھی سامنے نہیں آئے۔

عالمی خبر رساں ادارے کے مطابق متحدہ عرب امارات کے محکمہ صحت کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ چین کی دوا ساز کمپنی سینو فارم کی ویکسین کے ٹرائل کے تیسرے مرحلے میں ملک بھر میں 125 ممالک سے تعلق رکھنے والے 31 ہزار رضاکاروں کو ویکسین لگائی گئی۔

ویکسین لگوانے والوں میں متحدہ عرب امارات کے نائب صدر اور وزیراعظم محمد بن راشد المکتوم بھی شامل ہیں جب کہ وزیر صحت سمیت چند اعلیٰ حکام نے بھی آزمائشی طور پر ویکسین لگوائی تھیں۔

متحدہ عرب امارات میں رواں برس ستمبر سے جاری ٹرائل میں سینو فارم کی ویکسین کو 86 فیصد تک مؤثر پایا گیا جب کہ ویکسین کا ’سیرو کنورژن ریٹ‘ 99 فیصد رہا، یہ ویکسین 18 سے 60 سال کے عمر کے افراد کو لگائی گئی تھی۔

خیال رہے کہ متحدہ عرب امارات میں کورونا وائرس کے مجموعی تعداد ایک لاکھ 78 ہزار 883 ہوگئی ہے جب کہ اس مہلک وائرس سے ہلاک ہونے والوں کی تعداد 596 ہے۔

واضح رہے کہ کورونا ویکسین کا سب سے پہلا ٹیکہ برطانیہ کی 90 سالہ خاتون کو لگایا جا چکا ہے، برطانیہ پہلا ملک ہے جہاں کورونا کی ویکسینیشن کا آغاز ہوگیا ہے تاہم انہوں نے فائزر کی ویکسین کا انتخاب کیا ہے۔

Editor

Next Post

پاکستان کیلئے ویزا پالیسی میں کوئی تبدیلی نہیں، پاکستانیوں کو  واپس بھی نہیں بھیجا جارہا۔سعودی سفیر

بدھ دسمبر 9 , 2020
پاکستان کیلئے ویزا پالیسی میں کوئی تبدیلی نہیں، پاکستانیوں کو  واپس بھی نہیں بھیجا جارہا۔سعودی سفیر پشاور،اسلا م آباد(ویب ڈیسک ) سعودی سفیر نواف المالکی نے کہا ہے کہ پاکستانیوں کیلئے ویزا پالیسی میں کوئی تبدیلی نہیں کی گئی اور پاکستانیوں کو سعودی عرب سے واپس بھی نہیں بھیجا جارہا۔میڈیا […]