چوہدری شجاعت آدھی بات کرکے ہمیں لب کشائی پر مجبور نہ کریں، حافظ حسین احمد

چوہدری شجاعت آدھی بات کرکے ہمیں لب کشائی پر مجبور نہ کریں، حافظ حسین احمد

جے یو آئی سے مذاکرات کی جو امانت چوہدری برادران کے پاس ہے وہ اس سے قوم کو آگاہ کریں

چوہدری شجاعت نے سچ کا ایک حصہ بتایا ہے وہ آدھی بات کرنے کے بجائے پورا سچ بتائیں

ہماری امانت کی کیا پوزیشن ہے چوہدری برادران بتائیںکیوں کہ کی اپنی امانتیں خطرے میں نظر آرہی ہیں

چوہدری برادران کو ہمارے پاس بھیجنے والے کوئی اور تھے کیوں کہ حکومتی کمیٹی پرویز خٹک کی سرپرستی میں بنائی گئی تھی

چوہدری برادران سے مذاکرات کے بعد ہی اپوزیشن کے رہنما جو پہلے ہی نیم دلی سے ہمارے ساتھ تھے مزید فاصلہ کرگئے

کوئٹہ( صباح نیوز)

جمعیت علمائے اسلام کے مرکزی ترجمان و سابق سینیٹر حافظ حسین احمد نے کہا ہے کہ چوہدری برداران ہماری امانت کے متعلق آدھی بات کرکے ہمیں مجبور نہ کریں کہ ہم پوری بات کے لیے لب کشائی کریں، آزادی مارچ کے مذاکرات کے حوالے سے جو امانت چوہدری برادران کے پاس ہے وہ اس سے قوم کو آگاہ کریں۔ چوہدری شجاعت کے آزادی مارچ کے متعلق بیان پر ایک نجی چینل سے گفتگو کرتے ہوئے جے یو آئی کے ترجمان حافظ حسین احمد نے کہا کہ ”چوہدری شجاعت کہہ رہے ہیں کہ ہم آزادی مارچ والوں کے درمیان اس لیے آئے تھے کیوں کہ کچھ لوگ آزادی مارچ والوں پر طاقت کا استعمال کرنا چاہتے تھے جس پرچوہدری پرویز الٰہی نے عمران خان کوایسا کرنے سے روکا ” حافظ حسین احمد نے کہا کہ چوہدری شجاعت نے سچ کا ایک حصہ بتایا ہے وہ آدھی بات کرنے کے بجائے پورا سچ بتائیں اور جو امانت ان کے پاس ہے اس کے متعلق پوری قوم کو آگاہ کریں آدھی بات کرکے ہمیں لب کشائی کے لیے مجبور نہ کیا جائے، انہوں نے کہا کہ اصل بات یہ ہے کہ عمران خان کا ریمورٹ کنٹرول چوہدری برادران نہیں بلکہ کوئی اور ہے ، چوہدری برادران کو جنہوں نے ہمارے پاس بھیجا اور انہوں نے چوہدری برادران سے کہا کہ عمران خان بات کریں تویہ اور بات ہے لیکن اس کی ضرورت نہیں پڑنی چاہئے تھی کیوں کہ نکے کو خود ہی وہ آرڈر کردیتے ہیں انہیں کسی اور کی ضرورت نہیں پڑتی،انہوں نے کہا کہ چوہدری برادران کو جنہوں نے آزادی مارچ کے وقت بات چیت کے لیے بھیجا تھا اور جو کچھ طے ہوا تھا چوہدری شجاعت اور چوہدری پرویز الٰہی نے کہہ دیا تھا کہ جو کچھ طے ہوا ہے وہ ہمارے پاس امانت ہے تواب اس امانت کے حوالے سے قوم کو آگاہ کیا جائے کہ اب اس کی کیا پوزیشن ہے کیوں کہ ان کی اپنی امانتیں جو حکومت کے ساتھ طے تھیں وہ بھی خطرے میں نظر آرہی ہیں، انہوں نے مزید کہا کہ ہم اس لیے اس امانت کے متعلق بات نہیں کرسکتے کیوں کہ ہمیں منع کیا گیا ہے اگرہمیں مجبور کیا گیا اور پارٹی نے اجازت دی تو جو اصل بات ہے وہ کہنا ہی پڑے گی لیکن اس کے باوجود جو سیاسی سمجھ بوجھ والے لوگ ہیں یقینا انہیں اصل امانت کے متعلق جو بات ہے سمجھ آچکی ہے اب اس کا کوئی اقرار کرے یا نہ کرے لیکن آدھی بات کرکے ہمیں مجبور نہ کیا جائے کہ ہم بھی کبھی لب کشائی کرسکیں، جے یو آئی کے ترجمان نے کہا کہ چوہدری برادران کو جن لوگوں نے مذاکرات کے لیے بھیجا تھا وہ عمران خان نہیںبلکہ ”وہ” تھے کیوں کہ عمران خان نے تو پرویز خٹک اور اسپیکرقومی اسمبلی اسد قیصر کو مذاکرات کے لیے نامزد کیا تھا یقینا چوہدری برادران کو بھیجنے والے عمران خان نہیں بلکہ ”وہ” تھے، انہوں نے کہا کہ چوہدری برادران سے مذاکرات کے بعد ہی اپوزیشن کے جو رہنما پہلے ہی نیم دلی کے ساتھ ہمارے ساتھ چلنے کی بات کررہے تھے انہوں نے بھی اس بات کو سامنے رکھ کر ہم سے فاصلے رکھے۔

 

Editor

Next Post

چیف جسٹس اطہر من اللہ اور اعتزاز احسن کے درمیان دلچسپ مکالمہ

جمعہ جولائی 10 , 2020
چیف   جسٹس اطہر من اللہ اور اعتزاز احسن کے درمیان دلچسپ مکالمہ اعتزاز صاحب ہم آپ کو وڈیو لنک پر خوش آمدید کہتے ہیں،چیف جسٹس اطہر من اللہ  میں یہاں بھی ماسک ساتھ رکھ کر اور سینیٹائزر استعمال کر کے بیٹھا ہوں،اعتزاز احسن اکیلے ہیں تو وہاں آپ کو ماسک […]