شوپیاں جعلی مقابلے میں ملوث بھارتی فوج کے کیپٹن نے شواہدضائع کرنے کی کوشش کی 

شوپیاں جعلی مقابلے میں ملوث بھارتی فوج کے کیپٹن نے شواہدضائع کرنے کی کوشش کی
بھارتی فوجی کیپٹن اور دو ملزمان نے اعلی افسران کواسلحہ بر آمدگی کے ثبوت بھی نہیں دیئے، چارج شیٹ میں انکشاف
سرینگر(ویب نیوز ) مقبوضہ کشمیرمیں شوپیاں کے امشی پورہ زینہ پورہ گائوں میں گزشتہ برس جون میں ہوئی فرضی جھڑپ کے حوالے سے پولیس نے اپنی چارج شیٹ میں کہا ہے کہ بھارتی  فوجی کیپٹن اور دیگر ملزم شہریوں نے ثبوتوں کو ضائع کرنے کی کوشش کی،جبکہ اس اسلحہ کو حاصل کرنے کے بارے میں کوئی معلومات فراہم نہیں کی،جو مارے گئے3 نوجوانوں سے برآمد کرنے کا دعوی کیا گیا تھا۔ چیف جوڈیشل مجسٹریٹ کی عدالت میں پیش کئے گئے فرد جرم میں بتایا گیا ہے کہ کیپٹن بھوپندر سنگھ نے فرضی مقابلہ ہونے کے بارے میں اپنے اعلی افسران اور پولیس کو اسلحہ کی بازیابی کے بارے میں غلط معلومات فراہم کی تھیں۔یہ معاملہ 18 جولائی 2020 میں شوپیاں کے امشی پورہ میں ہونے وا لی جھڑپ سے متعلق ہے جس میں 3 نوجوانوں کو ہلاک کرکے جنگجوقرار دیا گیا تھا۔ بعد ازاں ، سوشل میڈیا پر یہ اطلاعات سامنے آنے کے بعد کہ یہ تینوں نوجوان بے گناہ ہیں، فوج نے کورٹ آف نکوائری کا حکم دیا۔چارج شیٹ میں کہا گیا ہے کہ نعشوں کے ساتھ رکھنے کیلئے مجرموں کی طرف سے غیر قانونی طور پر لائے گئے غیر قانونی ہتھیاروں کو حاصل کرنے کے ذرائع سے متعلق کوئی بھی معلومات حاصل نہیں ہوئیں۔اس میں مزید کہا گیافرضی جھڑپ کرکے تینوں ملزمان نے جان بوجھ کر ایسے ثبوت یا حقیقی جرم کو ختم کر دیا جو انہوں نے سرزد کیا ہے اور وہ20لاکھ روپے کی انعامی رقم کے حصول کے مقصد کیلئے مجرمانہ سازش کی کڑی کے طور پر غلط معلومات پیش کر تے رہے۔تاہم ، فوج نے اس کی تردید کی تھی کہ کیپٹن نے 20 لاکھ روپے کیلئے تصادم کیا ،جبکہ اس بات کی وضاحت کی کہ اہلکاروں کو جنگی حالات میں یا کسی بھی طرح کی ڈیوٹی کے دوران خدمات انجام دینے پر نقد انعامات دینے کا کوئی نظام موجود نہیں ہے۔چارج شیٹ میں کہا گیا  ثبوت ملزم کیپٹن سنگھ نے ختم کردیئے تھے۔چارج شیٹ کے مطابق ، سنگھ نے ، جنھیں نظربند کیا گیا ہے ، دیگر 2 ملزموں،تابش نذیر اور بلال احمد لون کے ساتھ ، مقام جھڑپ پر ایک پناہ گاہ کو آگ لگا دی۔ملزم کیپٹن ، ایس اوجی کے ساتھ وابستہ ایس پی او فیاض احمد کے ساتھ عام شہریوں کے نام پر رجسٹرڈ دو موبائل نمبروں کے ذریعے سے رابطے میں تھا۔ فیاض احمد ، جو اس معاملے میں بطور گواہ ہیں ، سے کپٹن سنگھ نے اسلحہ کے بندوبست کے لئے رابطہ کیا تھا۔جموں کے علاقے پونچھ کے رہائشی ، فیاض حمد نے مجسٹریٹ کے سامنے فوجداری ضابطہ اخلاق (سی آر پی سی)کے سیکشن 164 کے تحت اپنا بیان دیا ہے۔ خصوصی تحقیقاتی ٹیم کے چارج شیٹ میں جرائم کے منظر نامے کے فارنسک تجزیہ کی تفصیلات دی گئیں ہیںجن پرہر ممکن نقطہ نظر سے عکاسی کی گئی ہے۔ ایف ایس ایل (فارنزک اینڈ سائنسی لیبارٹری)ٹیم نے ایسے اہم شواہد برآمد کرکے قبضے میں لئے ہیں۔ایس آئی ٹی آر پی (صورتحال رپورٹ) کی ایک کاپی کے ساتھ واقعہ کے دوران فائر کیے گئے گولہ بارود کی تفصیلات کے بارے میں62 راشٹریہ رائفلز کی جانب سے خصوصی تحقیقاتی ٹیم کو دائر جوابات کی بنیاد پر ، ملزم فوجی کپتان نے دعوی کیا تھا کہ انہوں نے اپنی سروس رائفل سے مجموعی طور پر 37 راونڈ فائر کئے تھے۔فوج نے ہیر پورہ پولیس اسٹیشن میں درج اپنی ایف آئی آر میں دعوی کیا تھا کہ امشی پورہ میں نامعلوم جنگجوئوں کو چھپانے کے بارے میں ان کی اپنی معلومات کی بنیاد پر ، جھڑپ کا آغاز 17 جولائی 2020 کوہوا تھاجس کے دوران 3نامعلوم جنگجوئوں کو جاں بحق کیا گیا۔ان کا کہنا تھا کہ تصادم کی جگہ سے 2 میگزین،2 پستول اور 4 خالی پستول گولیاں ، 15 گولیاں اور اے کے 47کی 15 خالی گولیاں اور دیگر قابل اعتراض سامان برآمد ہوا۔تاہم ، موقعہ واردات کے بیلسٹک اور فارنسک معائنے کے دوران ، 4 خالی گولیاں برآمد ہوئیں ، ان میں سے دو 7.65 ملی میٹر اور دو 9 ملی میٹر پستول (فوج کے زیر استعمال) سے تھے۔ برآمد کئے گئے پندرہ 7.62×39 ملی میٹر رائفل گولی کیس(اے کے رائفل میں استعمال ہوتے ہیں) کو چار سے زیادہ ہتھیاروں سے فائر کیا گیا تھا۔ جائے جرائم کے حالات سے جو بیلسٹک ماہر کی رائے، ملزم کیپٹن بھوپندر سنگھ کے بیان سے متضاد ہے۔۔۔۔جو ایف آئی آر میں ان کے ذریعہ پیش کردہ معلومات سے میل نہیں کھاتی۔فرضی جھڑپ کے دوران کوئی بھی اے کے رائفل برآمد نہیں ہوئی۔فوج نے اپنی کورٹ آف انکوائری اور شواہد کا خلاصہ بھی مکمل کرلیا ہے جس میں یہ بات سامنے آئی ہے کہابتدائی پہلو کے شواہد مل گئے تھے کہ تصادم آرائی کے دوران فوجیوں نے آرمڈ فورسز اسپیشل پاور ایکٹ (افسپا) کے تحت اختیارات کو عبور کر لیا ہے جس میں تینوں نوجوان ہلاک ہوگئے تھے۔ جس کے بعد ، فوج نے تادیبی کارروائی کا آغاز کیا تھا۔امشی پورہ میں جاں بحق ہونے والے تینوں نوجوانوں میں امتیاز احمد ، ابرار احمد اور محمد ابرار شامل تھے ، وہ سب راجوری ضلع کے رہنے والے تھے۔ بعدازاں ڈی این اے ٹیسٹ کے ذریعے ان کی شناخت کی تصدیق ہوگئی اور لاشیں گذشتہ سال اکتوبر میں بارہمولہ میں ان کے اہل خانہ کے حوالے کردی گئیں۔چارج شیٹ میں کہا گیا تھا کہ جھڑپ کے دن فوجی کپٹن ایک نجی کار لے گیا تھا۔گاڑی کے مالک اعجازحمد لون نے  مجسٹریٹ کے سامنے حلف کے تحت بیان دیا تھا کہ گذشتہ سال17 جولائی کو آرمی کے اہلکار ان کی رہائش گاہ پر ان کے پاس آئے تھے اور ان کی گاڑی لے گئے تھے۔اس کے بعد ،جھڑپ کے دن ، فوج نے انہیں اطلاع دی کہ اس کی گاڑی امشی پورہ نار میں خراب حالت میںکھڑی ہے۔15ویں کور کے کمانڈر لیفٹنٹ جنرل بی ایس راجیو نے پہلے کہا تھا کہ شواہد کی تفصیلات مکمل ہوچکی ہے اور فوج قانون کے تحت آئندہ کی کارروائی عمل میں لائے گی۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ کیپٹن سنگھ ممکنہ طور پر افسپا کے تحت حاصل اختیارات اور سپریم کورٹ کی طرف سے منظور شدہ فوجی سربراہ کی جانب سیکیا کرنا ہے اور کیا نہیں کرنا ہے کی خلاف ورزی کرنے کی پاداش میں کورٹ مارشل کا سامنا کریں گے۔ پولیس کی خصوصی تحقیقاتی ٹیم کی جانب سے پیش کردہ فرد جرم میں انہوں نے اپنی تحقیقات کے حق میں75گواہوں کو فہرست میں شامل کیا ہے،جبکہ فنی شواہد بشمول مجرموں کے کال ڈاٹا ریکارڈ کو بھی پیش کیا ہے

Comments are closed, but trackbacks and pingbacks are open.