کے ایم ڈی سی کا عملہ 9 ماہ سے ﺗﻨﺨﻮﺍﮨﻮﮞ ﮐﯽ ﻋﺪﻡ ﺍﺩﺍﺋﯿﮕﯽ ﮐﺎ ﺷﮑﺎﺭ

کراچی (ویب ڈیسک)

ﮐﺮﺍﭼﯽ ﻣﯿﮉﯾﮑﻞ ﺍﯾﻨﮉ ﮈﯾﻨﭩﻞ ﮐﺎﻟﺞ (کے ایم ڈی سی) ﮐﮯ ﮈﯾﻨﭩﻞ ﮨﺎﺅﺱ ﺁﻓﯿﺴﺮﺯ کی جانب سے احتجاج کیا گیا جس میں عملے کا کہنا تھا کہ وہ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً 9 ﻣﺎﮦ ﺳﮯ ﺳﻨﮕﯿﻦ ﻣﺴﺎﺋﻞ ﮐﺎ ﺷﮑﺎﺭ ﮨﯿﮟ۔

ﮐﺮﺍﭼﯽ ﻣﯿﮉﯾﮑﻞ ﺍﯾﻨﮉ ﮈﯾﻨﭩﻞ ﮐﺎﻟﺞ کے عملے کی جانب سے احتجاج کے دوران بتایا گیا کہ ﮈﯾﻨﭩﻞ ﮨﺎﺅﺱ ﺁﻓﯿﺴﺮ ﻧﻮ ﻣﺎﮦ ﺳﮯ ﺗﻨﺨﻮﺍﮨﻮﮞ ﮐﯽ ﻋﺪﻡ ﺍﺩﺍﺋﯿﮕﯽ ﮐﺎ ﺷﮑﺎﺭ ہیں اور عالمی وبا کورﻭﻧﺎ ﻭﺍﺋﺮﺱ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﺍﻥ شعبہ دندان سازی سے منسلک افراد وبا کورونا وائرس کا بھی ﺷﮑﺎﺭ رہے ﮨﯿﮟ۔

ﮐﺮﺍﭼﯽ ﻣﯿﮉﯾﮑﻞ ﺍﯾﻨﮉ ﮈﯾﻨﭩﻞ ﮐﺎﻟﺞ کے ڈاکٹروں کی جانب سے کہا گیا ہے کہ عالمی وبا کے کورونا وائرس کے دوران ﻓﺮﺍﺋﺾ ﮐﯽ ﺍﺩﺍﺋﯿﮕﯽ ﺩﻟﺠﻤﻌﯽ ﺳﮯ مختلف اسپتالوں میں ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﯾﺘﮯ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ، ﮈﯾﻨﭩﻞ ﮨﺎﺅﺱ ﺁﻓﯿﺴﺮﺯ ﮐﻮ ﻧﮧ ﺗﻮ ﺍﻋﻼﻥ ﺷﺪﮦ کورﻭﻧﺎ ﻭﺍﺋﺮﺱ ﺭﺳﮏ ﺍﻻﺅﻧﺲ ﻣﻼ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮨﯽ 9 ﻣﺎﮦ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺗﻨﺨﻮﺍﮨﯿﮟ ﺩﯼ ﮔﺌﯽ ﮨﯿﮟ۔

ڈاکٹرز کے مطابق ﺳﻨﺪﮪ ﮔﻮﺭﻧﻤﻨﭧ ﻧﮯ ﺩﻭ ﺳﺎﻝ قبل ﺳﻨﺪﮪ ﮐﮯ ﮨﺎﺅﺱ ﺁﻓﯿﺴﺮﺯ ﮐﯽ ﺗﻨﺨﻮﺍﮦ ﭘﯿﻨﺘﺎﻟﯿﺲ ﮨﺰﺍﺭ ﺭﻭﭘﮯ ﻣﻘﺮﺭ ﮐﯽ تھی ﻟﯿﮑﻦ ﮐﮯ ﺍﯾﻢ ﺳﯽ ﺍﺱ ﺣﮑﻢ کی  ﺧﻼﻑ ﻭﺭﺯﯼ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮨﺎﺅﺱ ﺁﻓﯿﺴﺮﺯ ﮐﻮ ﺗﯿﺲ ﮨﺰﺍﺭ ﺭﻭﭘﮯ ﻣﺎﮨﺎﻧﮧ  دے رہا ہے ، 3ﻣﺎﮦ ﮐﯽ ﺗﻨﺨﻮﺍﮨﻮﮞ ﮐﯽ ﺍﺩﺍﺋﯿﮕﯽ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ 9 ﻣﺎﮦ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺗﻨﺨﻮﺍﮦ ﺍﺏ ﺗﮏ ﮈﯾﻨﭩﻞ ﮨﺎﺅﺱ ﺁﻓﯿﺴﺮﺯ ﮐﻮ ادا نہیں ﮐﯽ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ۔

کے ایم ڈی سی کے عملے کی جانب سے اپیل کی گئی ہے کہ وہ معاملات بات چیت کے ذریعے حل کرنا چاہتے ہیں مگر اُن کی کہیں سنوائی نہیں ہو رہی، اس لیے اُنہیں مجبوراً سڑکوں پر آنا پڑا ہے۔

Comments are closed, but trackbacks and pingbacks are open.