پاک بحریہ کو راول ڈیم کنارے نیوی سیلنگ کلب کی ممبرشپ جاری کرنے سے روک دیا گیا

اسلام آباد ہائی کورٹ نے پاک بحریہ کو راول ڈیم کنارے نیوی سیلنگ کلب کی ممبرشپ جاری کرنے  سے روک دیا۔

اسلام آباد ہائی کورٹ میں راول ڈیم کے کنارے نیوی سیلنگ کلب کی تعمیر کے خلاف کیس کی سماعت ہوئی۔ عدالت نے نیوی کو کلب کی ممبرشپ جاری کرنے  سے بھی روک دیا۔

نیول چیف کی جانب سے سابق اٹارنی جنرل اشتر اوصاف نے وکالت نامہ جمع کراتے ہوئے جواب جمع کرانے کیلئے مزید مہلت کی استدعا کی جو منظور کرلی گئی۔

درخواست گزار نے کہا کہ عدالتی حکم کے مطابق کلب سیل نہیں ہے اور  نیوی کی جانب سے ابھی بھی کلب کی ممبرشپ دی جارہی ہے۔

نیول چیف کے وکیل اشتر اوصاف نے کہا کہ  نیوی سیلنگ کلب عدالتی حکم کے مطابق سیل ہے۔

چیف جسٹس اطہر من اللہ   نے کہا کہ رپورٹ میں تو گزشتہ سماعت پر بتایا گیا کہ کلب سیل کردیا گیا، آپ یقینی بنائیں گے کہ کلب سیل ہے عدالت کو آپ پر اعتماد ہے،  عدالتی حکم کے خلاف مس کنڈکٹ کسی بھی طرف سے ہوا تو کارروائی ہو گی، کون سا قانون ہے جس کے تحت نیوی اس قسم کی سرگرمی کرسکتی ہے؟  یہ سنجیدہ معاملہ ہے، راول جھیل کے کنارے کیا ایسا کچھ کیا جا سکتا ہے؟۔

عدالت نے آئندہ سماعت سے قبل جواب جمع کرانے کی ہدایت کرتے ہوئے سماعت 19اگست تک  ملتوی کردی۔

Editor

Next Post

خیبر پختونخوا اسمبلی نے پبلک سروس کمیشن ترمیمی بل 2020 کی منظوری دے دی

جمعہ اگست 7 , 2020
پشاور خیبر پختونخوا اسمبلی نے پبلک سروس کمیشن ترمیمی بل 2020 کی منظوری دے دی، اپوزیشن اراکین نے سوالات کے جوابات نہ دینے پر ناراضگی کا اظہار کیا۔ خیبرپختونخوا اسمبلی اجلاس اسپیکرمشتاق غنی کی صدارت میں ہوا، وقفہ سوالات کے دوران مختلف محکموں کی جانب سےاپوزیشن ممبران کو جواب نہ […]