پرویز الہٰی کے بیٹے ،بہو اور فرنٹ مین کی 13ارب کی جائیداد وبینک اکاؤنٹس منجمدکر دیئے گئے

تمام پراپرٹیز، بینک اکاؤنٹس ایف آئی اے کی درخواست اور ٹھوس شواہد کی بنیاد پر منجمد کیے،عدالتی فیصلہ

لاہور(ویب  نیوز)

ایڈیشنل سیشن جج لاہور نے پاکستان تحریک انصاف کے صدر اور سابق وزیر اعلی چودھری پرویز الہی کے بیٹے راسخ الہی اور ان کی بہو اور فرنٹ مین کی 10 ارب مالیت کی جائیداد اور 22بینک اکاونٹس منجمد کرنے کا حکم دے دیا۔پرویز الہٰی کے خاندان کے ارکان کے خلاف منی لانڈرنگ کیس کی سماعت ہوئی۔ایڈیشنل سیشن جج لاہور چوہدری غلام رسول کی عدالت نے ان کی پراپرٹیز اور بینک اکاؤنٹس منجمد کرنے کے احکامات جاری کیے۔فیصلے میں کہا گیا ہے کہ تمام پراپرٹیز، بینک اکاؤنٹس ایف آئی اے کی درخواست اور ٹھوس شواہد کی بنیاد پر منجمد کیے، پراپرٹیز اور بینک اکاؤنٹس اینٹی منی لانڈرنگ ایکٹ 2010 کے تحت منجمد کیے گئے ہیں۔فیصلے کے متن کے مطابق پراپرٹیز اور بینک اکاونٹس ملزمان کے خلاف منی لانڈرنگ کی تحقیقات مکمل ہونے تک منجمد رہیں گے، عدالت نے شریک ملزموں کے 22 بینک اکاؤنٹس فریز کرنے کے احکامات جاری کیے، بینک اکاونٹس میں تقریبا ساڑھے 3 ارب روپے بھیجے گئے ہیں۔فیصلے میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ کرپشن کا پیسہ مختلف بے نامی بینک اکاونٹس اور بے نامی کمپنیوں کے ذریعے لانڈر کیا گیا، گزشتہ دور میں چوہدری فیملی نے فرنٹ مینوں کے ذریعے منی لانڈرنگ سے اربوں کی جائیدادیں بنائیں۔ عدالت نے راسخ الہٰی اور ان کی اہلیہ کی اربوں روپے کی پراپرٹیز اور بینک اکاونٹس جبکہ مونس الہی کی اہلیہ کے بینک اکاونٹس منجمد کرنے کا حکم دے دیا۔ ایڈیشنل سیشن جج لاہور نے شریک ملزمان احمد فاران خان، محمد رشید، عامر سہیل اور ارشد اقبال کے بھی بینک اکاونٹس و پراپرٹیز منجمد کرنے کا حکم دیا ہے۔ عدالت نے چوہدری برادارن کے فرنٹ مین قیصر اقبال بھٹی اور عابد احمد بھٹی کے بینک اکاونٹس جبکہ شریک ملزمان کی تقریبا 10ارب روپے مالیت کی 17 ہزار 420 کنال اراضی منجمد کرنے کا حکم دیا ہے۔