کابینہ کا پیکا ایکٹ میں ترامیم پرمشاورت کے لئے خصوصی کمیٹی قائم کرنے کا فیصلہ
 توشہ خانہ تحائف کے قوانین  میں ترامیم کی منظوری ممنوعہ تحائف تلف ہونگے،

اسلام آباد (ویب  نیوز)

وفاقی کابینہ نے  توشہ خانہ تحائف کے قوانین  میں ترامیم کی منظوری دے دی  ممنوعہ تحائف کو تلف کردیا جائے گا،تحائف کا تخمینہ لگانے والوں کے اعزازیہ میں  اضافہ کیا جائے گا، پیکا ایکٹ میں ترامیم پرمشاورت کے لئے خصوصی کمیٹی قائم کرنے کا فیصلہ کرلیاگیا کمیٹی میں اتحادی جماعتوں کے نمائندے شامل ہوں گے ۔وزیراعظم محمد شہباز شریف کی زیر صدارت منگل کو  وفاقی کابینہ کا اجلاس اسلام آباد میں ہوا۔ وزیر اعظم نے اظہار خیال کرتے ہوئے  گزشتہ روز آزاد جموں و کشمیر کی موجودہ صورت حال کے حوالے سے منعقدہ  اجلاس میں حالیہ صورتحال کا مفصل جائزہ لینے کے بعد کشمیری عوام کے مسائل کو حل کرنے کیلئے وفاقی حکومت نے 23 ارب روپے کی فوری فراہمی کی منظوری دے دی گئی۔ انہوں نے آزاد جموں و کشمیر کی صورت حال پر معاملہ افہام و تفہیم سے حل کرنے کے حوالے سے صدر آصف علی زرداری ، وزیراعظم آزاد جموں و کشمیر چوہدری انوار الحق، وزیر امور کشمیر  امیر مقام اور دیگر سیاسی زعما اور سرکاری افسران کا شکریہ ادا کیا۔  وفاقی کابینہ نے وزارت قانون و انصاف کی سفارش پر ایپیلیٹ ٹریبیونل ان لینڈ ریونیو ( کنڈیشنز آف سروس) رولز 2024  کی منظوری دے دی۔ ان قواعد کے تحت ان ٹریبیونلز کے ممبران کی تعیناتی کی جائیگی۔ ان ٹریبیونلز کا بنیادی مقصد ٹیکس سے متعلق زیر التوا مقدمات کا جلد نمٹانا ہے۔ توشہ خانہ تحائف کے قوانین  میں ترامیم کی منظوری دے دی۔ ان ترامیم کے تحت وہ شیلڈز، سوینیئرز اور اس طرح کے دیگر تحائف جو کہ وصول کنندہ اپنے پاس نہیں رکھے گا اسے وصول کنندہ کے ادارے کی عمارت کے احاطے میں کسی بھی نمایاں جگہ پر رکھا جائے گا اور اس کا باقاعدہ ریکارڈ رکھا جائے گا۔  کتب کے تحائف جو وصول کنندہ اپنے پاس نہیں رکھے گا وہ وصول کنندہ کے دفتر یا کسی پبلک لائبریری میں رکھے جائیں گے اور اس کی باقاعدہ فہرست بنائی جائے گی ۔ایسے تحائف جو پاکستان کے قوانین کے تحت ممنوع ہیں انہیں کابینہ ڈویژن کی جانب سے قائم کی جانے والی کمیٹی کی موجودگی میں تلف کردیا جائے گا۔ اسی طرح توشہ خانہ کے تحائف کا تخمینہ لگانے والے نجی شعبے کے ماہر کے اعزازیہ میں بھی اضافہ کیا جائے گا ۔یاد رہے پی ڈی ایم حکومت کے دور میں اس وقت کی وفاقی کابینہ نے توشہ خانہ پالیسی 2023 کی منظوری دی تھی جس کے تحت صدر، وزیراعظم اور کابینہ ارکان سمیت دیگر سرکاری عہدیداروں پر 300 امریکی ڈالرز  سے زائد مالیت کا تحفہ حاصل کرنے پر پابندی عائد کردی گئی۔ اس پالیسی کے تحت کوئی بھی پبلک آفس ہولڈر 300 امریکی  ڈالرز سے زائد مالیت کا تحفہ اپنے پاس نہیں رکھ سکے گا، 300 ڈالر سے کم کا تحفہ مروجہ طریقہ کار کے تحت رقم ادا کر کے حاصل کیا جا سکتا ہے۔*وفاقی کابینہ نے کابینہ کمیٹی برائے لیجسلیٹو کیسز کی 7 مئی 2024 کو لئے گئے فیصلوں کی توثیق کر دی تاہم پاکستان الیکٹرانک کرائمز ایکٹ 2016 میں ترامیم کو مشاورت کے لئے ایک خصوصی کمیٹی قائم کرنے کی ہدایت کی جس میں اتحادی جماعتوں کے نمائندے شامل ہوں گے اور اس کمیٹی کی قیادت مشیر وزیراعظم سیاسی امور رانا ثنااللہ کریں گے۔ وزارتِ قومی صحت کی سفارش پر کرک ہیومینیٹیرین ، امریکہ اور جنید فیملی فانڈیشن ،امریکہ کی جانب سے حاملہ خواتین کے لیے ملٹی مائیکرو نیوٹریئنٹس سپلیمنٹس کی عطیہ کی گئی 10 لاکھ بوتلوں کو ٹیکس اور ڈیوٹی سے استثنا دینے کی منظوری دے دی۔ کابینہ نے وفاقی قانون و انصاف کی سفارش پر سرمایہ کاری محتسب کی تعیناتی کے قوانین کی شق 3(1)ای میں  ترمیم کی منظوری دے دی۔ اس ترمیم کے تحت سرمایہ کاری محتسب کے عہدے کے لئے کامرس ، فنانس یا دیگر متعلقہ شعبہ میں ڈگری کی شرط لازم ہے۔ اقتصادی رابطہ کمیٹی کے 7 مئی 2024 کو منعقد ہونے والے اجلاس میں کیے گئے فیصلوں کی توثیق کردی۔